فقیر اخوندذادہ سیف الرحمان حنفی نقشبندی قادری چشتی سہروردی تحریر حافظ نبی گل

فقیر اخوندذادہ سیف الرحمان حنفی نقشبندی قادری چشتی سہروردی
تحریر حافظ نبی گل
جب بھی اسرارِ باطل نےسر اُ ٹھایا تو انوارِ خداوندی کی لازوال چمک ہی اس کےطلسم کو پارا پارا کرنےکا باعث بنی خیر و شر کا تصادم تو ازل سےجاری ہےمگر فیصلہ کن معرکےمیں فتح کامل ہمیشہ ان مردانِ حق کا مقدر بنی ہےجنہوں نےحق و صداقت فکروعمل اور ایمان و ایقان کےچراغ روشن کئےبرصغیر پاک و ھند کی تاریخ ان صوفیائےکرام مشائخ عظام اور علماءحق کےکارناموں سےجگمگا رہی ہےجنہوں نےبر صغیر میں تبلیغ اسلام سےلےکر قیامِ پاکستان تک ہر میدان میں ایمانی استقامت اور روحانی و نظریاتی پامردی کا مظاہرہ کرکےعظمتِ اسلام اور دو قومی نظریہ کےپرچم کو اُ فق تا اُ فق عرصہ حیات کی انتہائی سربلندیوں پر لہرایا ہےان کےپیشِ نظر ہمیشہ یہ حقیقت رہی ہےکہ ستیزہ کار رہا ہےازل سےتا امروز چراغ مصطفوی سےشرار بولہبی صوفیائےکرام مخلوقِ خدا کی ایسی تربیت کرتےہیں کہ ان میں جزبئہ اخوت پیدا ہو جاتا ہےجس کےبارےمیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و Èلہ وسلم نےفرمایا مسلمان مسلمان کا بھائی ہےنہ تو اس پر ظلم کرتا ہےاور نہ اسےبےیارومددگار چھوڑتا ہےجو شخص کسی مسلمان کی دنیاوی تکلیف دور کرتا ہےاللہ تعالی قیامت کےدن کی تکلیف کو دور فرمائےگا جس نےکسی تنگ دست پر Èسانی کی اللہ تعالی دنیا و Èخرت کےمعاملات اس پر Èسان فرما ئےگا جس نےکسی مسلمان کےعیبوں کو چھپایا اللہ تعالی دنیا و
Èخرت میں اس کےعیبوں پر پردہ ڈال دےگا اللہ اس وقت تک بندےکی مدد فرماتا رہتا ہےجب تک بندہ اپنےبھائی کی مدد کرتا رہتا ہےاس حدیثِ مبارکہ سےایک مسلمان کےدوسرےمسلمان سےتعلقات اسلامی معاشرہ میں ایک دوسرےکی خیر خواہی اور ہمدردی اخوت بھائی چارہ اور مخلوق خدا کےساتھ بھلائی کا اجروثواب اور خلق خدا پر احسان کرنےپر اللہ اور اس کےرسول اللہ صلی اللہ علیہ و Èلہ وسلم کی رضا و خوشنودی کی وضاحت فرمائی اسی ضمن میں ایک اور مقام پر ارشاد فرمایا اللہ کےبندوں میں سےکچھ لوگ ایسےہیں جو نہ نبی ہیں نہ شہید پھر بھی انبیاءو شہدا قیامت کےدن ان کےمرتبےپر رشک کریں گےجو انہیں اللہ تعالی کےہاں ملےگا صحابہ کرام # نےعرض کی یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ و Èلہ وسلم یہ کون لوگ ہوں گےÈپ صلی اللہ علیہ و Èلہ وسلم نےفرمایا یہ وہ لوگ ہوں گےجو Èپس میں ایک دوسرےکےرشتہ دار نہیں تھےاور نہ Èپس میں مالی لین دین کرتےتھےبلکہ محض خدا کےدین کی بنیاد پر ایک دوسرےسےمحبت کرتےتھےاسی محبت و اخوت کےرشتےکو مضبوط بنیادوں پر استوار کرنےکےلئےایک مرد درویش ولی کامل حضرت اخند ذادہ سیف الرحمن صاحب نےاپنی زندگی کا لمحہ لمحہ صرف کر رکھا ہےمجد د عصر حاضر شیخ المشائخ سیدنا و مرشدنا حضرت علامہ اخند زادہ حضرت پیر سیف الرحمان پیرارچی خراسانی مبارک قدس سرہ ولد صوفی باصفا قاری سرفراز خان قادری صاحب رحمتہ اللہ علیہ کی ولادت باسعادت ١٣٤٩ ھجری کو کوٹ بابا کلی افغانستان میں ہوئی Èپ بچپن ہی سےعلم کا شوق و جذبہ رکھتےتھےاور نہایت متقی و پرہیز گار تھےÈپ نےابتدائی تعلیم اپنےوالد بزرگوار سےشروع فرمائی Èپ Èٹھ سال کی عمر کےتھےکہ Èپ کی والدہ ماجدہ کا انتقال ہو گیا ان کی وفات کےبعد Èپ نےمزید علوم دین حاصل کرنےکےلئےافغانستان و ھندوستان کےمختلف شہروں کا سفر کیا علوم دین سےسند فراغت حاصل کرنےکےبعد Èپ نےشیخ المشائخ شاہ رسول طالقانی رحمتہ اللہ علیہ سےطریقہ عالیہ نقشبندیہ میں بیعت فرمائی شاہ صاحب کےوصال کےبعد Èپ ان کےخلیفہ غوث دوران حضرت مولانا محمد ھاشم سمنگانی کی تربیت میں رہےانہوں نےÈپ کی مکمل تربیت فرمائی اور Èپ کو اپنا خلیفہ مطلق اور نائب بنایا اور حضرت مولانا صاحب سمنگانی رحمتہ اللہ تعالی علیہ نےÈپ کےبارےمیں اپنےخلفاءکو یوں ارشاد فرمایا کہ میرےکمالات کےنقشِ ثانی میرےشریک کار اور عاشق حضرت اخند زادہ سیف الرحمان صاحب کو جو شخص مقبول ہوگا وہ مجھےبھی مقبول ہےاور ان کی طرف سےجو مردود ہو گا وہ میری طرف سےبھی مردود ہےپھر Èپ بہت عرصہ تک افغانستان میں روس کےخلاف جہاد کرتےرہےÈپ لوگوں کو شریعت و طریقت میں تربیت بھی فرماتےرہےاور کافی تعداد میں علماءکرام Èپ کےحلقہ ارادت میں داخل ہو ئےاور جب تَرَ کی کا انقلاب Èیا اور اپنی دھریت کےفرمان جاری کرنےلگےتو انہوں نےھجرت اختیار کی Èپ نےعظیم الشان دارالعلوم جامعہ سیفیہ کا قیام فرمایا جس میں جید علمائےکرام تدریس فرما رہےہین اور سینکڑوں کی تعداد میں طلباءعلم کی تشنگی بجھا رہےہین Èپ سےاستفادہ کےلئےدور دراز سےعلماءکرام حاضر ہوتےہین اس وقت حضرت صاحب کےدس ہزار سےزائد خلفاءموجود ہین جن میں کچھ مقید اور کچھ مطلق ہین اس کےعلاوہ ڈاکٹر بزنس مین سیاسی و سماجی
زندگی سےتعلق رکھنےوالےہزارں کی تعداد میں اور مختلف طبقہ فکر اور بیرونی ممالک سےخاصی تعداد میں لوگ Èپ سےفیوض و برکات حاصل کر رہےہین قران و حدیث اور فقہ حنفی کی ترجمانی عقائد اہلنست و لجماعت کےمطابق فرما رہےہین Èپ کےہاتھوں کثیر تعداد میں غیر مسلموں نےاسلام قبول کیا اور حلقہ بیعت میں داخل ہوئےاور Èپ سےتربیت حاصل کرنےکےبعد اپنےاپنےممالک میں جاکر اسلام کی خدمت کر رہےہین کمال کی بات یہ ہےکہ غیر مسلم جب Èپ کی زیارت کرتےہین تو Èپ کےروحانی کمال کو دیکھ کر دائرہ اسلام میں داخل ہو جاتےہین اور Èپکی زیارت سےواقعی خدا یاد Èتا ہےاس وقت امریکہ برطانیہ جرمنی Èسٹریلیا جاپان کینیڈا فرانس انڈیا کیرالہ اور عرب ممالک میں کافی تعداد میں Èپ کےخلفاءاور مریدین ہین بعض اخبارات جو Èپ کی شخصیت سےناواقف ہین انہوں نےبعض حاسدین کی جھوٹی باتیں جن کی نہ کوئی اصل ہےاور نہ کوئی حقیقت اخبارات اور ہینڈ بلز اور پوسٹر وغیرہ چھاپ کر سرکار اخند زادہ مبارک کی شخصیت کو بدنام کرنا چاہتےہین ہماری طرف سےدعوت عام ہےجو چاہےجب چاہےجس جگہ چاہےتحقیق کرلےپہلےسرکار کی زیارت کریں پھر کوئی بات کرین اس دور میں سرکار اخند زادہ مبارک کےعلاوہ اس طرح کی شخصیت ہم نےکہیں بھی نہیں دیکھی Èپ وہ ہیں جو لاکھوں دلوں کو ذکِر الہی سےمنور فرمارہےہین اور Èپ کےغلام Èپ کےاشاروں پر ہر قربانی دینےکےلئےتیار ہین جس کی شہادت سنی کنونشن موچی دروازہ لاہور اور سنی کانفرنس اٹک ہےاور مخا لفین کا پروپیگنڈہ جھوٹ اور فریب پر مبنی ہےحضرت مرشدنا اخند زادہ مبارک نےاپنی زباں سے
اولیاءمتقدمین پر اپنی زات کو کبھی بھی فوقیت نہیں دی حضرت صاحب کےیہ ارشاداتِ گرامی معترضین کی اصلاح کیلئےکافی ہیں کہ فقیر سلسلہ عالیہ قادریہ میں حضرت غوث الثقلین شیخ عبدالقادر جیلانی رحمتہ اللہ علیہ کا تابع مرید اور خلیفہ ہےمزید فرماتےہیں کہ میں بحمد اللہ تعالی اللہ جلالہ کا عاجز بندہ ہوں کہ تمام سرزمین پر اپنےÈپ سےبااعتبار ذوق کوئی اور مجھےادنی ترین نظر نہیں Èتا اور میں خاتم النبین حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ و Èلہ وسلم کا اُ متی ہون اور حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی ختم نبوت پر اعتقاد رکھتا ہوں اور فروع و فقہ میں حضرت امام اعظم ابو حنیفہ نعمان بن ثابت کو فی رضی اللہ عنہ کا مقلد ہون اور اصول وعقائد میں اہل سنت و الجماعت کےعظیم پیشوا حضرت امام ابو منصور ماتریدی رحمتہ اللہ علیہ کا تابع ہون اور تصوف و طریقت میں حضرت خواجہ بزرگ محمد بہاءالدین شاہ نقشبند رحمتہ اللہ علیہ حضرت امام ربانی مجدد الف ثانی رحمتہ اللہ علیہ حضرت غوث الثقلیں شیخ عبدالقادر جیلانی رحمتہ اللہ علیہ حضرت شیخ شہاب الدین سہروردی رحمتہ اللہ علیہ اور حضرت خواجہ معین الدین چشتی اجمیری رحمتہ اللہ علیہ کی تعلیمات کا تابع اور انہیں بزرگان دین کا بالواسطہ مرید ہون انہوں نےکہا ہےکہ میں انبیاءکرام اور صحابہ کرام# سمیت تمام اولیا ءکرام کا خادم ہوں میں ان کی شان میں گستاخی کا سوچ بھی نہیں سکتا جھوٹےالزامات لگانےوالےخود اس حدیث کی بنا پر اس جرم عظیم کا مرتکب ہو رہےہیں کہ ترجمہ ‘ ایک Èدمی دوسرےÈدمی کو فاسق یا کافر نہیں ٹھہراتا اور اگر کسی کو فاسق یا کافر ٹھہرایا اور فی الحقیقت وہ کافر یا فاسق نہ ہو تو تکفیر و تفسیق کرنےوالا خود کافر یا فاسق بن جاتا ہی!
الحدیث انہوں نےفرمایا کہ اخبارات والےایسی باتیں چھاپنےسےقبل تحقیق کرین بغیر تحقیق کےایسی باتیں اچھالنےاور چھاپنےوالےحضرات از روئےشریعت گنہگار ٹھہرتےہینانہوں نےوضاحت کرتےہوئےکہا کہ میں نےکبھی بھی ایسی بات نہیں کہی اور نہیں لکھی جس سےحضرات انبیاءعلیھم السلام صحابہ کرام# اور اولیاءعظام میں ذرا بھر بھی تنقیصِ شان ہو انہوں نےکہا ہےکہ میرےبعض مریدین جب کتابیں چھاپ رہےہیں تو اس پر تبرکاً میرا نام لکھتےہیں اور شائع کرتےہین ایسی تحریرات سےمیرا قطعی کوئی تعلق نہین میں تمام مسلمانوں سےاپیل کرتا ہو ں کہ وہ ایس باتوں پر دھیان نہ دیں تاکہ مسلم تشخص مجروح نہ ہو اور باہمی اخوت کےرشتےختم نہ ہون


Print Friendly, PDF & Email

Attachments

Related Posts

  • 76
    ایک نابغہء روزگار روحانی شخصیت حضرت علامہ محمد یوسف جبریل تحریر : محمدعارف پروفیسر سید اللطائفہ حضرت جنید بغدادی کو فقر کا منصب اس لئےعطا ہوا کہ انہوں نےاہلِ بیت کی تعظیم کی۔ فقراءاور اہل اللہ نےاپنی تعلیمات کو ساد ہ و آسان اسلوب میں ڈھال کر ہمیشہ پیش کیا…
  • 75
    مختصر تعارف علامہ محمد یوسف جبریل 17فروری 1917ءکو وادی سون سکیسر ضلع خوشاب میں ملک محمد خان کےگھر پیدا ہوئی۔ یہ وہی تاریخ بنتی ہےجس تاریخ کو بائیبل کےمطابق طوفان نوح آیاتھا ۔اس دور کو بھی ایک طوفان دیکھنا تھا مگر مختلف قسم کا ۔ طوفان نوح آبی تھا مگر…
  • 73
    بسم اللہ الرحمن الرحیم اللھم صلی علی محمد و علی آلہ و اصحابہ و اھل بیتہ و ازواجہ و ذریتہ اجمعین برحمتک یا الرحم الرحمین o توحید اور تولید قرآن و سنت کی روشنی میں (ایک تقابلی جائزہ ) پیش لفظ ان صفحات میں ایک حقیر اور ادنیٰ سی کوشش…
  • 72
    علامہ محمد یوسف جبریل ایک جائزہ تحریر محمد عارف علامہ یوسف جبریل کی زندگی پر بہت کچھ لکھاجاسکتا ہی۔ وہ سال ہاسال سےمسلمانان عالم کو بیدار کرنےمیں مصروف عمل رہی۔ وہ قرانی تعلیمات کی روشنی میں دنیاکو امن اور سلامتی کا پیغام دیتےرہےہیں۔ علامہ یوسف جبریل کی شخصیت نہایت عجیب…
  • 69
    ہر انسان کو اللہ تعالی نےکوئی نہ کو ئی خوبی عطا کی ہوتی ہےاور یہ کہ ہر انسان میں بہت سی پوشیدہ صلاحیتیں ہوتی ہیں ۔لیکن اگر بہت سی صلاحتیں اور خوبیاں ایک انسان میں یکجاہوجائیں تو یہ کمال حیرانی کی بات ہوتی ہےاگر انسان اپنےاندر پائی جانےوالی ان ایک…
  • 68
    وقاص شریف ، تلاشِ حقیقت کا شاعر تحریر : محمد عار ف (ٹیکسلا) طالب قریشی، جوگی جہلمی اور تنویر سپرا کی سرزمین وادی جہلم کےدامن میں کھاریاں واقع ہی۔ جہاں کےعلمی و ادبی منظر نامےمیں ایک نئےشاعر وقاص شریف کا ظہور ہواہے۔ وقاص شریف کا شعری مجموعہ ” سازِ دل“…
  • 67
    ”کن فیکون“ پر خواجہ محمد عرفان ایوب کریمی کا تبصرہ ”کن فیکون“ نامی کتاب تحریر محمد عارف میں ملک شوکت محموداعوان نےمندرجہ مضمون میں اپنےوالد محترم کی شخصیت کےمختلف پہلو اجاگر کئےہیں۔ بہر حال شوکت محمود اعوان کو یہ اعزاز حاصل ہےکہ انہوں نےاپنےوقت کےعظیم دانش ور کی خدمت کا…
  • 67
    علامہ محمدیوسف جبریل لمحہءموجود کےدانش ور فلسفی تحریر محمد عارف ٹیکسلا علامہ محمد یوسف جبریل لمحہ موجود کےبالغ نظر دانشور ، فلسفی، دانائےملت، شاعر اور ادیب تھی۔ آپ نےاپنےرشحاتِ قلم کےذریعے نصف صدی تک امت مسلمہ کےحساس طبقےکو علم و دانش کی روشنی سےمنور کیا۔آپ نےمسلم مفکراور ایٹمی سائنس دان…
  • 67
    نصب العین : علامہ محمد اقبال ، علامہ یوسف جبریل ، اور دیگر مفکرین و بزرگانِ دین کےاُفکار کی عام فہم انداز میں ترویج و اشاعت اغراض و مقاصد: ٭نوجوانوں کی فکری راہنمائی اور فکری بہبود کیلئےکام کرنا۔ ٭تعلیمی اداروں میں جا کر نصب العین کا پرچار کرنا۔ ٭نصب العین…
  • 67
    بابا جی عنایت اللہ اور جمہوری نظام مملکت تحریر : پروفیسرمحمد عارف بابا جی عنایت اللہ اور پاکستان لازم و ملزوم ہیں۔ بابا جی نےاپنی نثری تالیفات میں صبح جمہوریت کو زبردست خراج عقیدت پیش کیا ہی۔ وہ فرنگی سیاست کی چالبازیوں، دو قومی نظریئےاور تشکیل پاکستان جسےموضوعات پر خامہ…
  • 67
    علامہ محمد یوسف جبریل اور علامہ محمداقبال۔ چند فکری مباحث تحریر محمدعارف علامہ محمد یوسف جبریل شعرا میں شمار نہیں ہوتےاور نہ ہی درحقیقت ان کا میدان شاعری ہےمگر اس امر سےانکار نہیں کیا جا سکتا کہ وہ علامہ محمد اقبال کی فکر تازہ اور اسلوب فن سےگہری مماثلت رکھتےہیں۔…
  • 66
    مسیحائےوقت“ کےبارےمیں صدائےزمان لاہور کےکالم تحریر : محمد عارف رائےمحمد اشرف صاحب کےروزنامہ ” صدائےزمان“ لاہور میں ” مسیحائےوقت“ کےنام سےجناب عنایت اللہ صاحب کا ایک کالم نظر سےگذرا۔ جناب عنایت اللہ صاحب محب وطن پاکستانی اور قومی نقطہءنظر کےحامل دانشور ہیں۔ جناب عنایت اللہ صاحب کی علمی تصنیف ”…
  • 66
    کیا پاکستانی ادب لمحہءموجود کی ضرورت ہے؟ تحریر محمدعارف ادب جغرافیائی حدود و قیود کا نام نہیں، بلکہ یہ ملکی سرحدوں کو عبور کرکےخطےکےجذبوں کو زبان عطا کرتا ہی۔ ادب پاکستانی نہیں ، ادب ایرانی نہیں، افغانی نہیں، انسانی ہوتا ہی۔ ہر ملک کی نظریاتی، جغرافیائی سرحدوں کو تحریروں میں…
  • 64
    ”چراغِ راہ“ تحریر : محمد عارف ٹیکسلا واصف علی واصف نےایک دفعہ کہا تھا کہ ” ہم زندگی بھر زندہ رہنےکےفارمولےسیکھتےرہتےہیں اور زندگی جب اندر سےختم ہو جاتی ہےتو ہم بےبس ہو جاتےہیں۔ کیونکہ ہم نےموت کا فارمولا سیکھا ہی نہیں ہوتا۔ اسلا م نےبامقصد زندگی کےساتھ بامقصد موت کا…
  • 64
    کینسر سےشدید بیمار، مایوس اور بےبس انسانوں کی نجات کےلئےکینسر کا روحانی علاج تحریر : شوکت محمود اعوان، ایڈیٹر کوارڈینیشن ہفت روزہ وطن اسلام آباد انسان کےلئےجہاں بےپناہ بیماریاں پیدا ہوئی ہیں،وہاں ان بیماریوں کےلئےعلاج بھی مہیا کر دیا گیا ہی۔ مگر علاج کی تراکیب مختلف ہیں جیسےدوا سے، نفسیاتی…
  • 63
    Introduction of shaukat m awan gen. secretary adara tehqiqul awan pakistan President Yousuf Jibreel Foundation sarparast ala bazme afqare gabriel wah cantt editor coordinator weekly watan islamabad شوکت اعوان شخصیت اور خدمات تحریر محمد عارف ١۔ شوکت محمود اعوان گیارہ نومبر انیس سو ترپن 11-11-1953میں بمقام کھبیکی وادی سون سکیسر…
  • 63
    محمد عارف کےحالات زندگی تحریر شوکت محمود اعوان واہ کینٹ نام محمدعارف ولدیت میاں محمد سال پیدائش 16 فروری 1969 مستقل پتہ گاو¿ں پنڈ فضل خان، تحصیل فتح جنگ، ضلع اٹک موجودہ پتہ I-R-36 ، نزد جنجوعہ ٹریڈرز، اعوان مارکیٹ فیصل شہید ٹیکسلا نمبر رابطہ 03335465984 تعلیمی کوائف:۔ ١۔ پرائمری…
  • 62
    حطمہ کی اہمیت پر نقاط تحریر شوکت محمود اعوان 1962 ءمیں علامہ محمد یوسف جبریل کو قرآن حکیم میں حطمہ( ایٹمی سائنس اور قران حکیم )کےبارےمیں انکشاف ہوا ۔ حطمہ کےبارےمیں آقا نبی کریم اور صحابہ کرام کےارشادات موجود ہیں۔ بعد میں مفسرین کرام نےاس پر خصوصی تحقیق کی اور…
  • 62
    مجرم عدلیہ کا کیس عوام الناس کی عدالت میں تحریر : رضوان یوسف اعوان بادشاہی کفر میں قائم رہ سکتی ہےمگر ظلم اور ناانصافی میں نہیں۔ جن قوموں میں عدل و انصاف ناپید ہو جاتا ہےتباہی و بربادی اس قوم کا مقدر بن جاتی ہی۔ عدل و انصاف قائم کرنا…
  • 62
    شعبہ جات شعبہ ریسرچ اینڈپلاننگ نوٹ: اصلاحی معاشرےکیلئےفلاحی ذہن کی ،فلاحی ذہن کیلئےذہن سازی کی،ذہن سازی کیلئےدلائل کی اور دلائل کیلئےتحقیق و مطالعہ کی ضرورت ہو تی ہے۔ ا)تحقیقی ایجنڈےکےمطابق مضامین اور کتابیں تیار کرنا اور نئےتحقیقی پہلوئوں کو اجاگر کرنا۔ ب)نصب العین سےمتعلق موضوعات پر کام کرنےوالوں کو ایک…

Share Your Thoughts

Make A comment

Leave a Reply

Copied!