آئینہ وقت تعمیر انسانیت کا ذریعہ تحریراشفاق احمد

043

ashfaqueahmadکتاب ’’آئینہ وقت‘‘ کے مصنف کو میں عرصہ پچیس سال سے جانتا ہوں۔ اور اس کے ساتھ وقت کی ہر بنت سے گذرا ہوں۔ جو دن ، دوپہر، شام ، رات، اور صبح کاذب اور صادق کے درمیان نئے نئے چھاپے چھاپتی ہے۔ اور نئے نئے رنگ ابھارتی ہے۔ عنائیت کو میں نے اچھے ، برے، تلخ، ترش،کھچاوٹ، کملاوٹ اور کرب و بلا کی کیفیتوں میں بھی دیکھا ہے۔ اس پر بوجھ بھی ڈالا ہے۔ اور اس کا بوجھ کبھی اٹھایا بھی ہے لیکن !
عنائیت اللہ کے موجودہ روپ کا اشارہ مجھے ماضی میں کبھی نہیں ملا تھا ۔ میرے وہم و گمان میں بھی نہ تھا ۔ کہ ایک روز جب گولڑہ موڑ پر پہنچے گا۔ تو اس پر ’’آئینہ وقت‘‘ جیسی کتاب وارد ہو جائے گی۔
یوں تو مغربی طرز جمہوریت پر حضرت علامہ نے بھی بڑی شدید تنقید کی ہے۔ اور ملت اسلامیہ کی بڑی بڑی اور معتبر دینی جماعتوں نے بھی اس کے منفی اثرات و آثار سے مسلمانان عالم کو آگاہ کیا ہے۔ لیکن جس سادگی ، صفائی، خلوص، اور دردمندی کے ساتھ عنائیت اللہ نے اس بلائے بیدرماں کاتجزیہ کیا ہے۔ وہ ایک معمولی فہم و فراست رکھنے والے ذہن میں بھی بہ آسانی آ جاتا ہے۔ اس کی مزید وضاحت کے لئے آخر کے اکیس سوالوں میں ڈائیرکٹ ایکشن کی روح کارفرما ہے۔ یہ سوالات نہیں ہیں۔ ہماری معاشرتی ، ملی، سیاسی، دینی اور اقتصادی زندگی کے انڈیکیٹر ہیں۔
جس طرح انسانی تاریخ میں بعض ایسے صحت مند موڑ موجود ہیں۔ جنہیں معمولی لوگوں ، معمولی کتابچوں، اور معمولی عملوں نے آنے والی نسلوں کے لئے مستقل کر دیا ہے۔ اسی طرح مجھے لگتا ہے۔ کہ عنائیت اللہ کا ’’آئینہ وقت‘‘ بھی تعمیر انسانیت کے کسی عظیم منصوبے کے لئے ڈائنا مائیٹ بن کر طاغوت کی ازلی بربادی کا سامان بن جائے گا۔
((اشفاق احمد))
۳ جولائی ۱۹۹۹ ء

 


Print Friendly

Download Attachments

Related Posts

  • 51
      انسانی ارتقاء تبدیلی کے بغیر ممکن نہیں۔ تبدیلی ماحول کی ہو، نظریات کی ہو یا خیالات کی، اس سے کئی مسائل جنم لیتے ہیں۔ بنیادی مشکل انسان کو ہر لحظہ درپیش رہتی ہے۔ وہ چاہے تبدیلی کاخیر مقدم کرے۔ یااسے کلی طور پر رد کر دے۔ ہر مقام پراسے…
  • 50
            To View/Download PDF in better font go to end of this post. ہم ہیں مسلم، ہے سارا جہاں ہمارا خودی کی زد میں ہے ساری خدائی خلق لکم ما فی الارض جمیعا (سورۃ البقرہ) ’’ ساری کائنات ہم نے آپ لوگوں کے لئے تخلیق فرمائی ہے…
  • 45
    عالمِ اسلام کے لئے جمہوریت ایکاہم مسئلہ ہے۔ جسے کبھی لطافت اور کبھی دل کی کسک کے ساتھ سو چا گیا ۔ اور کبھی جمہوریت کو بانسری کا الم نامہ بنا کر پیش کیا گیا اوریوں جمہوریت مسلمانوں کے لئے حقیقت، عرفان ، روحانی رموز و حقیقت کاروپ دھا ر…

Share Your Thoughts

Make A comment

Leave a Reply