مختصر تبصرہ جات


خانقاہ قادریہ صاحبزادہ مدثراحمدقادری سجادہ نشین دربار پیر مہدی احمدنگر غربی واہ کینٹ کےتاثرات
اسلام علیکم ! نائب مشن حضرت علامہ محمد یوسف جبریل
مجھےافسوس ہےکہ بیس سال سےحضرت خواجہ محمدصوفی رفیق قادری صاحب والیءجلالہ شریف ٹیکسلا سےملاقات رہی اور ساتھ ہی رہنےوالےحضرت علامہ جبریل کی زیارت نہ ہوسکی۔شایداس لئےکہ یہ اس طرح سےجاتا کہ کسےخبر نہ ہو اور موتی چن لوں ۔آج جب کہ اعلیٰ حضرت قادری صاحب ہم میں موجودنہیں ۔ کہ پہاڑی احمدنگر پر حضرت کےصاحبزادےصاحب تشریف لائےاور جبریلی مشن بوساطت اللہ دتہ صاحب اور حضرت ڈاکٹر اکرام اللہ خان کےطفیلBird eye view کی طرز کےمطالعےنےہی ایک ایٹمی جذبات پید ا کئے۔ کئی بار مضامین لکھےلیکن آپ تک پہچا نہ سکا ۔ کاش کہ روزانہ بھی جنگ اخبار میں آ پ کےافکار سےملت کےشیرازہ کو بحال کیا جا سکتا ہی۔ نواب آباد کی دو نواب شخصیات نےایک نےزندگی میں یعنی قادری صاحب اور دوسری جبریل صاحب نےاور وصال کےبعد بےحد متاثر کیا ۔ ہم ان کی قابل قدر تعلیمات اپنی پہاڑی پر کندہ کریں گی۔ تاکہ آئندہ آنےوالی نسلیں ان سےمستفید ہو سکیں۔ ہم اللہ دتہ صاحب کےمشور ہیں جن کی وساطت سےروح مقدس روح سےملی۔ قادری صاحب اور جبریل صاحب کا دونوں کےملتےجلتےمشن ہیں۔بلکہ ایک ہی مشن بیداری کا تھا۔ اور خدا نےاس مشن پر انہیں بےحد کامیاب فرمایا۔ ان کی یہ نظم اعوان ہم وہی اولاد ہیں علی کی ۔ اعوان ہیں ہم اور پاسبان ہیں ہم اور قابل قدر پیشین گوئیاں اور سائنس سےقران حکیم ک ثبوت وغیرہ ۔قابل قدر مطالعہ رہتا ہےان کی کتب سےانشاءاللہ لکھتےرہیں گےاور آپ تک مضامین مقالہ جات روانہ کروں گا کہ اسےبھی ریکارڈ رکھا جاسکی۔ سورج کی روشنی جب چاندپر پڑتی ہےتو چاند بھلا لگتا ہےان کی پر جلال شخصیت کےجمالی پہلو ہم سےروشن ہوں گےکہ ہمہی جلال کی اسقدر تاب
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خانقاہ قادریہ صاحبزادہ مدثراحمدقادری سجادہ نشین دربار پیر مہدی احمدنگر غربی واہ کینٹ کےتاثرات
اسلام علیکم١ نائب حضرت علامہ جبریل یوسف ۔۔۔ جوں جوں مطالعہ علامہ یوسف جبریل بڑھتا جا رہا ہےتوں توں کوئی نہ کوئی نظم آن وارد ہوتی ہی۔ ذیل میں دو عظیم شخصیات پر مبنی ایک قطعہ :۔

جلالہ شریف نواب آباد کی دو عظیم شخصیات
کوٹ کوٹ کر بھر ی تھیں ان میں محمد کی صفات
اک تھےمحمدکےادیب دوسرےراہ فقر کےنقیب
دونوںسےجب ملیں توکھلتےہیں نصیب
ان کےانوار سےآباد روڈ جلالہ ہی
اےنواب آباد تو کتنا قسمت والا ہی
اک مرشد رفیق قادری اور دوسرےیوسف جبریل
دیکھ کےجن سےکانپتا ہےاب بھی عزازیل
مدثر قادری دونوںکا اسیر کہ دونوں تھےاکسیر
دونوں ملت کےنگہباں اور محمد کےسفیر

جناب محمد یوسف جبریل میرےپاس تشریف لائےتھی۔ انہوں نےاپنا کلام مسودےکی صورت میں مجھےدکھایا اور میں نےاسےجستہ جستہ پڑھا۔جبریل صاحب اسلام کی لگن رکھتےہیں اور ان کا کلام ایک دردمند دل کی پکار ہی۔ کلام پرعلامہ اقبال کےابتدائی دور کےکلام کا اثر نمایاں ہی۔ ان کےمسودات شائع ہو جائیں تو اس سےقوم کےنوجوانوں کو بہت فائیدہ ہو گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ڈاکٹر وحید قریشی ایم اےفارسی، ایم اےتاریخ، پی ایچ ڈی فارسی ، پی ایچ ڈی اردو، این 269 سمن آباد ۔ سیکرٹری ریسرچ سوسائٹی دیال سنگھ پبلک لائبریری نسبت روڈ لاہور
بعض احباب کی وساطت سےجناب محمد یوسف جبریل سےتعارف کا موقع حاصل ہوا ۔آپ ایک دردمند قومی مفکر ہیں۔ جنہوں نےاردو اور انگریزی میں اپنےخیالات کو قلمبند کیا ہی۔ مجھےآپ کی کتاب نعرہ جبریل کےکچھ حصےسننےکا اتفاق ہوا۔ درد سےمعمور ہیں۔ افسوس ہےکہ کوتاہی وسائل کی بنا پر یہ نظمیں قوم تک نہیں پہنچ سکیں۔ امید ہےکہ کوئی دردمند پبلشر جرات رندانہ سےکام لےکر ان کی قوم تک رسائی کا انتظام کر سکےگا۔وسلام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

احقر العباد محمد علاوالدین صدیقی عفی عنہ صدر شعبہ ءعلوم اسلامیہ پنجاب یونیورسٹی لاہور
مکرمی !جناب جبریل صاحب کا غیر معمولی کلام ایک مختصر وقفہ کےلئےمجھےبھی دیکھنےکا اتفاقاً شرف حاصل ہوا ۔ اس قلیل فرصت میں اُ ن کےرشحات ِ قلم نےمیرےدل و دماغ پر نہائت گہرےتاثرات چھوڑےہیں ۔ اُ ن کےملی اور انسانی جذبےکو جس قدر بھی قدرو منزلت کی نگاہ سےدیکھا جائےوہ اس کا جائز مستحق ہی۔ آپ کا کلام ہر چند کہ بظاہر نظم کی خوبیوں سےآراستہ ہےلیکن بباطن ِ مواد کی ہیئت پر معتد بہ ترجیح ہی۔ اصل اہمیت آپ کےموضوع اور اسکےمحرک جذبہ کو حاصل ہی۔ ہر چند کہ پیرایہءاظہار نےمنظوم صورت اختیار کر کےاس کےحسن و تاثیر میں چند در چند اضافہ کیا ہےلیکن فی الاصل آپ کو شاعر کہنےیا سمجھنےمیں اسی غلط فہمی اور غلط کاری کا احتمال ہےجس کےبارےمیں علامہ اقبال مرحوم نےفرمایا تھا۔
من اےمیر امم داد از تو خواہم
مرا یاراں غزلخوانےشمردند
میری دلی خواہش اور دُ عا ہےکہ اللہ تعالیآپ کےاس پاکیزہ جذبےکو مناسب طور پر بارآور کری۔آمین۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اظہر جاوید مکتبہءادب جدید چوک بل روڈ لاہور سول ایجنٹ مجلس ترقیادب ادارہ ثقافت اسلامیہ بزم اقبال فلوسوفیکل کانگریس۔

علامہ یوسف جبریل کو میں ایک مدت سےجانتا ہوں ۔ انگریزی میں ان کےمقالات میری نظر سےگذرتےرہی۔ حال ہی میں انہوں نےمومن کا منشور کےنام سےایک طویل نظم لکھی ہی۔ اس سےپہلےوہ نعرہ جبریل بھی لکھ چکےہیں۔ کلام میں کہیں کہیں قدامت کا رنگ ضرور ہےتاہم ان کےخلوص ایمانی کا بخوبی اندازہ ہوتا ہی۔ اس نظم کو میں نےجستہ جستہ دیکھا ہےمیرا خیال یہ ہےکہ موجود ہ دور کےمسائل جو جس محنت اور توجہ سےانہوں نےدیکھا ہےاور ایمان کی حرارت سےجس طرح اپنےکلام کو مزین کیا ہےاس سےوہ نوجوانوں کی ذہنی تربیت میں ضرور کامیاب ہوں گی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈاکٹرعبدالوحید قریشی پی ایچ ڈی، اردو ڈیپارٹمنٹ ا ورنٹیل کالج لاہور

آج جناب محمد یوسف جبریل سےملاقات ہوئی۔ انہوں نےاپنی مسدس نعرہ اور آئینہ جستہ جستہ مقامات سےسنائیں۔ ان کا دل درد قوم سےمعمور ہی۔ پوری نظم جوش اور ولولہ کی حامل ہی۔ اس دور الحاد میں وہ قوم کو دعوت ایمان دیتےہیں اور نوجوانوں کو راہ راست پرگامزن ہونےکی تلقین کرتےہیں ۔انہیں تہذیب جدید کی خرابیوں سےبچانا چاہتےہیں۔ یہ کوشش کس حد تک کامیاب ہوئی ہےاس کا جواب وہ سوز و گداز ہےجو دونوں نظموں کی جان ہی۔ مجھےیقین ہےکہ اگر کوئی ناشر اس کی طباعت کا انتظام کر دےگا تو جناب جبریل صاحب کی پسندیدہ مساعی بار آور ہو گی اور ہماری قوم ان کےحکیمانہ خیالات سےاستفادہ کرےگی۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آقا بیدار بخت ایم اےایم او ایل ایل ایل بی ایڈوکیٹ ہائی کورٹ پاکستان ٥٤ فلیمنگ روڈ لاہور 21-9-1963

نور خوش بخت ہوں نسبت مجھےجبریل سےہی
ضو کہ جو فن میں مرےہےاسی قندیل سےہی
اک قیامت سی بپا نعرہءجبریل سےہی
بڑھ کےباطل کےلئےصور اسرافیل سےہی
یہ میں جو اک فطرتِ سیماب لئےپھرتا ہوں
یہ عنایت بھی میرےدوست کی تشکیل سےہی
فیل بدمست ہےگر لشکر باطل کا غرور
تو حفاظت میرےکعبےکی ابابیل سےہی
آشنائےوصل کی منزل نہ ہو شائید اس سے
لفظ لطف جو آرزوئےتشنہءتکمیل سےہی
ملک رشید نور ایم اےایل ایل بی ایڈوکیٹ گرین ٹاون لاہور
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

” نعرہ جبریل“ طفیل کمالزنی

جبریل کا نام بطور شاعر بہت کم کسی نےکبھی سنا ہی۔ مگر کلامِ جبریل کاحصہ موسوم بہ ”نعرہ جبریل“ ایکآواز ہےجو خون جگر میں جل کر اٹھی ہےایکآتش فشاں پہاڑ کا لاوا ہےجو ہر خشک و تر کو بھسم کرتا ہوا پہاڑ کی چوٹی سےہرطرف پھیلتا نظرآتا ہے۔یہ ایک ایسیآواز ہےجو طبعاً کسی فنی یا عروضی ضابطےکو قبول نہیں کرتی بادل کی گرج شیر کی دہاڑ یا ہاتھی کی چنگھاڑ سُر سےلےگُر تال کےتکلف سےآزاد ہوتی ہی۔ اگرچہ سننےوالوں کا دل دہلا کےرکھ دیتی ہےتاہم جبریل نےشیر کی اس دہاڑ کو فن شاعری کےاصول و ضوابط کا پابند کرنےمیں ایسی مہارت کا مظاہرہ کیا ہےاور شاعرانہ عبقریت کا ایسا حیرت انگیز ثبوت دیا ہےاور جا بجا صنائع وبدائع کا اس چابکدستی سےاستعمال کیا ہےاور الفاظ کی دروبست بندش کی چستی اور بےساختگی اور کلام کی روانی کا کچھ ایسا سحرآفریں منظر پیدا کیا ہےجو فقط کسی ممتاز استادِ فن سےہی متوقع ہو سکتا ہی۔ جبریل کا طوالت کےباوجودآدمی کو بور نہیں کرتی بلکہ دلچسپیآخیر تک قائم رہتی ہی۔ اُ ن کےسارےکلام پر علامہ اقبال کا اثر نمایاں ہی۔” نعرہ جبریل“ کا کلام 1962تا 1969تک کہا گیا۔ برسوں گذرنےکےبعدآج بھی تروتازہ ہی۔آ پ کا کلام پیشین گوئیوں کا ایک سلسلہ ہے۔ علامہ صاحب ایک عقابی نگاہ رکھتےہیں اور صدیوں بعد کےآنےوالےواقعات کو بہت پہلےشاعری کی زبان میں بیان کر دیتےہیں۔ دعا ہےکہ مسلمان قوم ان کی شاعری سےاستفادہ کر سکی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جناب علامہ یوسف جبریل صاحب ،خدمت اسلام ، عشقِ رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اورانسانی زندگی کو تباہ کاریوں سےبچانےکےلئےمفید قسم کےمعلوماتی آرٹیکل لکھنےمیں دنیا بھر میں شہرت رکھتےہیں ۔آپ نےایٹمیآگ کی قرانی تشریح، جبریل کا اسلامی بم ،ایٹمی آگ کی قرانی تشریح، ایٹمی جہنم بجھانےکا قرانی فارمولا، بیکن دجال اور ایٹم بم، فقر غیور،جدیداور قدیم اٹامزم، نعرہءجبریل، (Gabriel trumpets the doomsday )) قران حکیم اور ایٹم بم کی پیشین گوئی جیسی تصانیف شائع کرکےدنیا والوں کےعلم اور معلومات میں شاندار اضافہ کیا ہے۔ خاص کر قران حکیم سےلفظ حُطَمَہ کی تخصیص اور تشریح سائنسی زبان میں کرنا اور قران حکیم میں سےایٹمی پیشین گوئی کا بیان کرناآپ کی باریک بینی ،پیش بینی اور علمی کاوش کا ایک لاجواب نمونہ ہی۔ کاشآپ کی یہ تصانیف وہ سائنس دان اور ملکی سربراہ بھی پڑھ لیں جو ایٹم بم جیسی تباہ کن چیز تیار کرکےبنی نوع انسان کی فوری تباہی کےلئےسائنسی لیبارٹریوں میں تیار کرکےہزاروں کی تعداد میں ذخیرہ کر رہےہیں ۔ تو ان کو خداوند تعالیٰ کی بھیجی ہوئی قرانی باریکیوں کی سمجھآ سکے۔ اور وہ اللہ تعالی کےکلام کی خصوصی نوعیت سمجھنےکےقابل ہو سکیں ۔ دعا کرتا ہوں کہ اللہ تعالیٰ جناب علامہ یوسف جبریل صاحب کو اس بلند پایہ تخصیص اور دنیائےانسانیت کو ایٹمی تباہی سےبچانےکےلئےایٹمی تصانیف کی اشاعت اور امن و امان قائم کرنےکےسلسلےمیں خدمت خلق کرنےپر جزائےخیر دے۔آمین ثُمآمین ۔
غازی منجم
صدرپاکستان نجوم سوسائٹی پرنسپل غازی منجم کالج بینک روڈ راولپنڈی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بزم اہلِ قلم ہزارہ ایبٹ آباد کی طرف سےایک خط
بزم اہل قلم ہزارہ ٣٢٧ مری روڈ ایبٹآباد
گرامی قدر جناب یوسف جبریل صاحب السلام علیکم ۔ خداآپ کو عمر دراز اور صحتِ کاملہ عطا فرمائی۔آپ کا شعری مجموعہ ”نعرہ جبریل“ خاکسار کو 29 نومبر کو اسلام آباد میں ایک کرم فرما نےپہنچایا۔ اس عطیےکےلئےسراپا سپاس ہوں۔آپ نےجس ملی جذبےکےتحت یہ کتاب لکھی ہےوہ قابلِ ستائش ہی۔آپ کی مسدس کےمطالعےسےپتہ چلتا ہےکہآپملتِ اسلامیہ کےعظیم فرزند حضرت علامہ اقبال کےافکار عالیہ اور ڈکشن سےکس قدر متاثر ہیں۔آپ کےاشعار کو پڑ ھ کر معلوم ہوتا ہےکہآپ کو ملتِ اسلامیہ کی موجودہ صورت حال سےکس قدر پریشانی ہےاور یہ شعرآ پ کےافکار عالیہ کی بھرپور طور پر عکاسی کرتا ہی۔
کشتی بھنور میں ہےاُمت کی خدا خیر کرے
واسطے اپنے محمد کے سدا خیر کری
یہ شعر بھیآپ کےپاکیزہ خیالات کی ترجمانی کرتا ہےاور پھر بھر پور طور پر

خیالآتا ہےجب بھی ملتِ بیضا کی حالت کا
نکل جاتا ہےمنہ سےناگہاں حرفِ خدا یارب
آپ کی اس دعا کو خدا اپنی بارگاہ میں شرفِ قبولیت عطا کرے۔
بول اس دور میں اسلام کا بالا کر دی
شمعءاسلام کا دنیا میں اجالا کر دی
ذوقِ عرفاں کی مسلماں کو فراوانی دی
جانثارانِ محمد کو جہانبانی دے
چند امور کی طرفآپ کی توجہ دلانےکی گستاخی کرتا ہوں۔
نیشِ خوں نوش یہ پہلو میں ضمیر اپنی ہی
منکر اپنی ہے یہ پیوستہ نکیر اپنی ہی
نہ کبیر اس سےہےپنہاں نہ صغیر اپنی ہی
جاں یہ بےدرد کےپنجےمیں اسیر اپنی ہی
میرےپہلو میں یہ خونخوار مجھےڈستی ہی
ڈنگ بن بن کے یہ ہر بار مجھےڈستی ہے
(صفحہ نمبر ٥٣ نعرہ جبریل )
کیا ضمیر کو مذکر باندھنا رسمِ عام نہیں؟
روزِ اول سےغریبوں کا لہو چوس کےپینےوالی
طبع ان بردہ فروشوں کی ہراساں ہو گی
(نعرہ جبریل صفحہ ٧٩ )
مصرعہ تبدیلی کامتقاضی ہے۔
رلاتی ہےمجھےاس قوم کی ناعاقبت بینی
جو چاہےتو تصور میں حَشَر تک دیکھ سکتی ہے
مسلماں ہوں مگر کھائیں وہ سود اقصائےعالم میں
پیئیں روزِ حَشَر ساقیء کوثر سے وہ جام ! اللہ
ہائےصد حیف کہ اس ملک کی ویرانی میں
آ کےدیکھو تو سہی روزِ حشر حاضر ہے
ان تینوں مصرعوں میں لفظ ‘حشر محلِ نظر ہےاکثر شعرائےکرام اس لفظ کو حشر باندھتےہیں نہ کہ ‘حَشَر۔ جیسےکسی نےکہا ہے
اٹھو و گرنہ حشر نہ ہو گا کبھی بپا
دیکھو زمانہ چال قیامت کی چل گیا

اگر دوسرےایڈیشن میں ان مصرعوں کو تبدیل کرکےشامل کیا جائےتو کیا بہتر نہیں ہو گا ۔غالباً اشاعت میں تعجیل کا یہ نتیجہ ہےبہر کیف میںآپ کےعطیےکےلئےبےحد ممنون ہوں بلکہ کبھی حاضر ہونےکی سعادت حاصل کروں گا۔ انشاءاللہ دعا کا طالب نیاز سواتی 10دسمبر 1968
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کتاب”قرآن حکیم کی پیشینگوئی ایٹم بم کےمتعلق“ مصنف علامہ محمد یوسف جبریل
(پاکستان اٹامک انرجی کمیشن کےایک تنقیدی جائزےکا ترجمہ)اورعلامہ صاحب کاجواب
کتاب کا مرکزی موضوع قرآن حکیم کی سورةالھمزہ میں پائی جانےوالی اصطلاح ”حطمہ“ کےگرد گھومتا ہی۔ حضرت مصنف جو جبریل کہلاتےہیں ایسامعلوم ہوتا ہےکہ بنی نوع انسانی کو ایٹمی دور کےمبینہ خطرات سےآگاہی دلانےکاعظیم عالمگیر جبریلی فریضہ ادا کرنا چاہتےہیں اور اس میں شک نہیں کہ ایک المناک تباہی سےانسانیت کی نجات کےضمن میں حضرت موصوف نےقرآنی فلسفےکو ایک مسلمہ بصیرت سےپایہ ءاثبات سےپیش کیا ہےاور انتہائی عر ق ریزی اور بےمثال جگر کاوی سےیہ حقیقت پایہ اثبات کو پہنچانےکی سعی بلیغ کی ہےکہ قرآن حکیم معجزانہ انداز میں نہ صرف ایٹم بم کےمتعلق نہایت واشگاف اور حیرت انگیزالفاظ میں پیشن گوئی کرتا ہےبلکہ اس کےساتھ ہی ان اسباب و علل کو بھی واضح ترین انداز میں جلوہ گر کرتا ہےجو ایٹم بم کی صورت ایک منطقی نتیجےکےطور پر ظہور پذیر ہوئےلہذا ان اسباب وعلل کورفع کر دینےمیں انسانیت کےلئےایٹم بم کےوجود سےنجات کاراز پوشیدہ ہی۔ حضرت مصنف کا عقیدےکی حدتک یہ خیال ہےکہ چونکہ قرآن حکیم کا یہ سراسرا راللہ تبارک و تعالیٰ کی مہربانی اور منشا سےاب منصہ شہود پر جلوہ آرا ہو چکا ۔ لہذا اب قرآن حکیم کےایک پیرو کی حیثیت سےخود ان پر اور ان کےعلاوہ ہر اس مسلمان پر جو قرآن حکیم اور دین اسلام پر یقین رکھتا ہےیہ فرض ہو چکا کہ اس انکشاف ربانی کی منادی روئےزمین کی جملہ اقوام و ملل کےدرمیان بتمام و کمال کر دی جائی۔ تاکہ اتمام حجت ہو جائےحضرت موصوف کی آواز معروف زمانہ فلسفی برٹرینڈ رسل کےاس قول سےہم آہنگ نظر آتی ہی۔۔ جس میں اس نےکہا تھا ۔ کہ ” جب سےآدم اور حوا نےگندم کا دانہ کھایا ۔آدمی نےکبھی بھی کسی بھی ایسی حماقت میں کوتاہی نہیں کی جس کا کہ وہ اہل تھا اور انجام ایٹمی تباہی ہی“۔
ایٹم بم کی اس قرآنی تطبیق میں حضرت مصنف یہاں تک کہہ گئےہیں کہ ایٹمی توانائی بہر حال اور بہر نوع تباہی پر منتج ہو گی۔ اس کےاستعمال کا مقصد خواہ کچھ بھی ہو یہاں ایک ایسےسنجیدہ مضمون پر جو نہایت مضبوط گرفت کا متقاضی ہی۔ مصنف کی گرفت جوبالعموم نہایت ہی قوی ہےکچھ کمزور پڑ جاتی ہی۔ حضرت مصنف ایک نہایت پر جوش اضطرابی قوت اور ایک دکھ بھرےدل اور ایٹمی ہتھیاروں کےخلاف انتہائی نفرت کےجذبےکےساتھ ایٹمی توانائی کےبنیادی وجود تک کو ایک ناپسندیدہ اور ناقابل قبول عنصر قرار دیتےہیں۔ اگرچہ ایٹمی توانائی انسانی بہبود و فلاح کےلئےکیوںنہ صرف ہو۔ ان کےاس رویہ کاجواز اس بات پر مبنی ہےکہ ایٹمی توانائی سےپیداہونےوالی ناگزیر تابکاری کےاثرات خواہ وہ توانائی پرامن مقاصد کےلئےمستعمل ہوخواہ جنگی مقاصد کےلئےلامحالہ ایک ناگزیر اٹل اور یقینی خطرےکی صورت میں انسانیت کی جانب بڑھتےہیں۔ اس طرح وہ اس امر کو فراموش کردیتےہیںکہ یہ تو سائنس کےبنیادی استعمالاتی پہلو پر ہی ایک اعتراض ہی۔ سائنس اصولی طور پر پرامن مقاصد یاتباہی ہر دو کےلئےاستعمال ہو سکتی ہی؛ اور اسی طرح ایٹمی توانائی بھی سائنس کےکسی دوسرےشعبےکی طرح انسانی بہبود اور تباہی دونوں کےلئےاستعمال میں لائی جا سکتی ہی۔ کیا ہی اچھا ہوتا کہ اس قدر سنجیدہ موضوع کےضمن میں جبریل صاحب ان وسیع احتمالات کو جو بھوک بیماری اور توانائی کےوسائل کی متوقع کمی کےحل کےلئےایٹمی تونائی میں موجود ہیں ۔نظر انداز نہ کرتی۔ اس قسم کےجملےمثلا ” ہر نیوکلن جو ایٹمی توانائی کےحصول کی خاطر ایٹم کےدل پر داغا جاتا ہی۔ خواہ یہ توانائی پاور ہاوس میں بجلی پیداکرنےکےلئےہو۔ خواہ ایٹم بم کی بجلی گرانےکی خاطر۔ انسانی امن اور انسانی زندگی کےدل میں ایک زہرآلود تیر ہے“۔یہ تاثر دیتےہیں کہ ایک پرجوش مصنف گرمی پیکار میں حد مضمون سےکچھ آگےبڑھ رہا ہی۔
جبریل کا انداز بیان اور آپ کی تحریر کا سٹائل بلاشبہ ادبی ہےاور ہر نوع سقم و ابتذال سےکلیتہ مبرا و منزہ غیر سائنسی سائنس دان فلسفی (Unscientific Scientist Philosopher ) کےٹیڑھےملحدانہ ذہن کےپنہاتی گوشوں کی تجزیاتی منظر کشی ایک طبع ذاد اور قابل قدر انکشافی معرکہ ہی۔ اورایسےاذہان کےباطنی علم کی باریکیوں کےاوپر ایک عمیق اور دقیقنگاہ کا پتہ دیتی ہی۔ حضرت مصنف نےاگرچہ نیوکلر سائنس کی باقاعدہ تعلیم حاصل نہیں کی لیکن اس مضمون پر آ پ کی گرفت آپ کو عبور اور اس کی باریکیوں کی سمجھ بلاشبہ حیرت ناک ہی۔
گو کہ اس کتاب کو پڑھتےوقت بادی النظر میں یہ تاثر ملتا ہےکہ حضرت کی مالی مشکلات یعنی کوتاہی وسائل اس مہماتی موضوع سےجو انہیں جان و دل سےعزیز ہی۔ متصادم ہیں جیساکہ آپ نےخود تسلیم کیاکہ یہ کتاب انہوں نےخوفناک حدتک نامساعد حالات میں لکھی ہی۔ تاہم یہ امرقابل غور اور قابل اطمینان ہےکہ کوئی بھی مشکل آپ کےپایہءاثبات کو متزلزل نہیں کرسکتی۔ اور ظاہری مایوسیوںاور دلشکنیوں کےباوجود آپ ایک آ ہنی عزم و اعتماد اورمومنانہ صبرو استقلال کےساتھ اس نورانی صبح کےانتظار میں ہیں جب ایٹم بم کےمتعلق اس معجزنما قرآنی پیشین گوئی کی طرف کماحقہ توجہ دی جائےگی۔
امید واثق ہےکہ یہ کتاب دانشور حلقوں میں قرآن حکیم اور سائنس کےاس روح پرور اور حسین امتزاج کو سمجھنےکےلئےجو جبریل کی نگاہ میں فقط ترقی کےلئےہی نہیں بلکہ انسانیت کی بقا کی خاطر بھی ایک امر لابدی ہے۔ ایک گرامی تصنیف کی حیثیت میںبننظر استحسان دیکھی جائےگی۔ دستخط
”فرحت اللہ “ پاکستان اٹامک انرجی کمیشن اسلام آباد


Print Friendly, PDF & Email

Download Attachments

Related Posts

  • 41
      علامہ یوسف جبریلؔ کی شاعری کا قطعاً مقصود شاعری نہیں بلکہ بھٹی سےاُ ٹھتےہوئےشعلوں سےلپکتی ہوئی چنگاریاں ہیں یا اندھیری رات میں متلاطم سمندر کی لہروں کی خوفناک صدائیں ہیں ۔ جوحال سےپیدا ہو کر مستقبل میں گُم ہوتی نظر آتی ہیں اور جس طرح قدرت کےہر عمل میں…
  • 40
    بسم اللہ الرحمن الرحیم اللھم صلی علی محمد و علی آلہ و اصحابہ و اھل بیتہ و ازواجہ و ذریتہ اجمعین برحمتک یا الرحم الرحمین o توحید اور تولید قرآن و سنت کی روشنی میں (ایک تقابلی جائزہ ) پیش لفظ ان صفحات میں ایک حقیر اور ادنیٰ سی کوشش…
  • 38
      علامہ یوسف جبریل ایک ایسےقلمکار ہیں جنہیں طویل کہانی اور فن کےرچا و میں ایک کمال حاصل ہی انہوں نےزندگی کو بہت قریب سےدیکھا ہےاس لئےوہ انسانی کرداروں کےرویوں ، ان کےلہجےاور نفسیاتی اشاروں سےکماحقہ واقف ہیں انہوں نےبڑی چابکدستی کےساتھ انسانی کرداروں کےبدلتےرنگوں اور تہذیبی عوامل کو اپنی گرفت…

Share Your Thoughts

Make A comment

One thought on “مختصر تبصرہ جات

Leave a Reply