چراغِ وقت احترام آد میت سے عبارت ہے تحریر فتح محمد ملک صاحب

051

fatehmuhammad

بابا عنایت اللہ صوفی ہیں مگر تارک الدنیا نہیں۔مجھے انکی یہ ادا بہت پسند ہے۔وہ طریقت اور معرفت کے اس مسلک سے وابستہ ہیںجو اس مادی دنیا کو روحانی روشنی سے نور۔‘ علیٰ نور کر دینا چاہتے ہیں۔یہ تمنا اس وقت تک پوری نہیں ہو سکتی،جب تک ذاتی مجاہدہ ء نفس اجتماعی زندگی میں پیوست نہ ہو۔بابا جی مادہ زندگی کے نا خوب کو خوب بنانے کی خاطر روحانی زندگی سے روشنی اخذ کرنے میں کوشاں ہیں۔وہ تصوف کی ان اقدار کو انسان کی اجتماعی زندگی میں عام کرنا چاہتے ہیںجو احترام آدمیت سے عبارت ہیں۔اقبال نے کیا خوب کہا: آدمیت احترامِ آدمی
با خبر شو از مقامِ آدمی
بندۂ حق از خدا گردد طریق
مے شود بر کافر و مومن شفیق

جمیعتِ آدم کا یہ تصور قرآن پاک سے ماخوذ ہے۔خلقنا بنی آدم کنفس واحد ہماری تہذیبی روایت میں اس قرآنی تصور کو شیخ سعدی شیرازی کے سے شاعروں نے عوام کے دلوں میں جا گزیں کر دیا ہے۔بنی آدم اعضائے یک دیگرند۔بابا جی وحدت آدم کے اس قرآنی تصور کو پوری دنیا میں عام کر دینا چاہتے ہیں۔انکے ہاں اس کار خیر کی ابتداء ملت ابراہیمی کے اتحاد اور یک جہتی کے تصور کو عملی شکل میں جلوہ گر دیکھنے کی آرزو سے عبارت ہے۔آج کی دنیا میں مختلف مذاہب کے درمیان بنیادی ہم آہنگی کی یہ تلاش ایک نہایت مبارک عمل ہے۔آج دنیائے انسانیت کو نفرت کے زہر کی بجائے محبت کے امرت کی ضرورت ہے۔بابا جی نوعِانساں کی اس اشد ضرورت کو سمجھتے بھی ہیںاور اسے پورا کرنے میں بھی کوشاں ہیں۔انکی زیر نظر کتاب چراغ وقت ہمارے عہد کی اس ضرورت کو پورا کرنے کی شدید تمنا ہی کا حسین ثمر ہے۔میں اس کتاب کی اشاعت پر انکی خدمت میں، بصد ادب و احترام،مبارکباد پیش کرتا ہوں۔اللہ سبحان وتعالیٰ انہیں اس نیک کام کو اسی جوش و خروش کے ساتھ جاری رکھنے کی ہمت عطا فرمائے۔مجھے اسی موضوع پر انکی مزید کتابوں کا انتظار ہے۔
پروفیسر فتح محمد ملک
چئرمین،قومی مقتدرہ ،اردو بورڈاسلام آباد

 


Print Friendly, PDF & Email

Download Attachments

Related Posts

  • 44
    بابا عنایت اللہ صاحب کی مختصر عرصے میں پانچ کتابیں قارئین تک پہنچ چکی ہیں ۔ چراغ وقت ۔سے پہلے ناد وقت،آواز وقت،ندائے وقت،صدائے وقت اور آئینہ ء وقت یکے بعد دیگرے شائع ہوچکی ہیں۔جیسا کہ میں اس سے قبل شائع ہونے والی کتاب میں یہ عرض کر چکا ہوں…
  • 37
            To View/Download PDF in better font go to end of this post. ہم ہیں مسلم، ہے سارا جہاں ہمارا خودی کی زد میں ہے ساری خدائی خلق لکم ما فی الارض جمیعا (سورۃ البقرہ) ’’ ساری کائنات ہم نے آپ لوگوں کے لئے تخلیق فرمائی ہے…
  • 36
    کتاب لکھنا ، کتاب پڑھنا اور پھر کتاب پر تبصرہ کرنا ایک انتہائی مشکل اور کٹھن کام ہے ۔ کتاب کے ساتھ انصاف نہیں کیا جا سکتا۔ جب تک صاحبِ کتاب کی شخصیت اور اس کے افکار سے شناسائی نہ ہو ۔ آئیے ! پہلے صاحب کتاب کی شخصیت سے…

Share Your Thoughts

Make A comment

Leave a Reply